. . .
. .
. .
Menu
30 Comments

تنقید کا جواب کیسے دیں

Spread the love
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

السلام علیکم

ہم میں سے ایسا کوئی بھی نہیں جس کو کسے کی جانب سے تنقید کا نشانہ نا بنایا گیا ہو۔ کسی کی عادتوں پر تنقید کی جاتی ہے، کسی کے کھانے پینے پر، کسی کی چال ڈھال پر تو کسی کی ذندگی میں اگر کوئی کمی ہے ، تو اسکو ایسے تنقید کا نشانہ بنایا جاتا ہے۔ جیسے یہ کمی اسکی اپنی کسی غلطی کا نتیجہ ہو۔ 

الغرض یہ کہ ہر انسان کسی نا کسی تنقید کا نشانہ بنتا ہے۔ مگر کچھ لوگ اس تنقید کو اپنا منفی پہلو بنا کر محفلوں سے دور بھاگنے لگتے ہیں۔ یا لوگوں سے تعلقات قطع کرنے لگ جاتے ہیں۔ آپ کا ایسا کرنا بلکل بھی مناسب نہیں۔ اس طرح آپ خود پر تنقید کرنے والی بڑی فہرست کو دعوت عام دے رہے ہیں۔ اور بظاہر تو آپ خود کو جھوٹی تسلی دے رہے ہوتے ہیں کہ آپ ایسے لوگوں کو اگنور کر رہے ہیں۔ مگر در حقیقت آپ خود کو اکیلا کرتے جا رہے ہیں۔ اور نفسیاتی دباؤ کا شکار ہو رہے ہیں۔ جسکا نتیجہ یہ ہوگا ۔ کہ یا تو آپ ڈیرھ اینٹ کی مسجد بنا کر بیٹھ جائیں گے۔ یا اپنی زندگی میں آنے والی خوشیوں کو جلنے کڑہنے کی نظر کر دینگے۔ اورتنقید کرنے والوں کو آپ کی زات میں خامیاں تلاش کرنے کے مزید مواقع فراہم کر دینگے

آپ کا یہ طرز عمل درست نہیں۔ آپ کو کچھ عادتیں خود میں پیدا کرنی پڑینگی۔  

جن میں سر فہرست ہیں

تنقید کو کھلے دل سے قبول کریں۔ اور خود کے لیئے چیلینج سمجھ کر اپنے آپ میں وہ خامیاں ختم کرنے کی بھر پور کوشش کریں۔ اسکے علاوہ   بجائے تنقید کرنے والے کے خلاف منفی رویہ ظاہر کرنے کے،تنقید کرنے والے ہی سے براہ راست ایسی خامی دور کرنے کا مشورہ لیں۔ اس سے نا صرف آپ کا اعتماد بحال ہوگا۔ بلکہ آپ اپنے آپ میں مثبت تبدیلی محسوس کریں گے۔ ب۔

تنقید کرنے والے کو مثبت جواب دیں۔ بجائے اسکے کہ آپ اپنے اوپر کی جانے والی تنقید سن کر سٹ پٹا اٹھیں۔ آپ کو چاہیئے کہ تنقید کرنے والے کو مثبت جواب دے کر ششدر کر دیں۔ ایسے کہ وہ آپ کے منفی پہلو کی بجائے مثبت پہلو کی طرف مائل ہو جائے۔

زندگی کی کمیوں کو اپنی خامی نا سمجھیں۔ ہم میں سے زیادہ لوگ ایسے ہیں جو، نصیب کے نام پر زندگی کی کسی بھی کمی کو اپنی خامی بنا لیتے ہیں۔ یہ طریقہ کر درست نہیں۔ آپ کے پاس جو ہے۔ وہ بہت سے لوگوں کے پاس نہیں ہے۔ اور جو بہت سے لوگوں کے پاس ہے۔ آپ اس سے محروم ہیں۔ یہ سب زندگی کا حصہ ہے۔ زندگی میں جو نعمت حاصل کرنا آپ کے اختیار میں ہے۔ آپ اسے جان کی بازی لگا کر بھی حاصل کر سکتے ہیں۔ مگر جو نعمت آپ کے اختیار میں نہیں۔ آپ چاہے زندگی بھی ہار جائیں وہ حاصل نہیں کر پائیں گے۔ لہٰذا تقدیر کے پیچھے بھاگنا چھوڑ دیں۔ آپ کا نصیب جو بھی ہے خود چل کر آپ کے پاس آتا ہے۔ اور جو چیز آپ کے اختیار میں نہیں آپ اسکے لیئے جواب دہ بھی نہیں۔ نعمتوں کی کمی پر تنقید کرنے والوں یا سوال پوچھنے والوں کے سامنے اپنی کمی پر دکھ کا اظہار بلکل نا کریں۔کیونکہ آپکی یہ کمی کوئی پوری نہیں کر سکتا۔ اور جو آپ کی یہ کمی پوری کر سکتا ہوگا۔ یقین مانیئے وہ آپ کو اس کمی کا احساس دلائے بغیر ہی آپ کو اس نعمت سے نواز دیگا۔

ایسے مواقع پر کسی کمی پر لوگ اگر ترس کھانے کے انداز میں آپ سے مخاطب ہوں۔ یا آپ سے سوال کریں۔ تو آپ نہایت اعتماد کے ساتھ اور مثبت انداز میں نفی میں جواب دے کر خاموش ہو جائیں ۔ یا جواب دینے کے بعد کسی اور عنوان پر گفتگو شروع کر دیں۔ مثال کے طور پر اگر کوئی آپ سے پوچھے کہ آپ کا قد چھوٹا کیوں رہ گیا۔ آپ کی رنگت کالی کیوں ہے یا ابھی تک آپ کے ہاں اولاد نہیں ہوئی۔ یا آپ کی منگنی نہیں ہوئی۔دولت یا شہرت کی کمی کیوں ہے ۔ایسے سوالوں پر آپ نے خود پر ترس نہیں کھانا۔ نا ہی سوال پوچھنے والے کو اپنا ہمدرد سمجھنا ہے۔ کیونکہ ہمدرد آپ سے زندگی کی کمی کیوں ہے جیسا سوال کر کے کبھی آپ کا دل نہیں دکھائے گا۔ بلکہ آپ کو دعا ہی دے گا۔ آپ نے بڑے مثبت انداز میں صرف اتنا جواب دینا ہے۔ کہ جی ہاں اولاد نہیں ہے میری۔ اللہ کی رضا، یا جی ہاں رشتہ نہیں ہوا۔ یا کچھ بھی۔ جس کی بنیاد پر آپ کو سوالوں کے کٹہرے میں کھڑا کیا گیا ہے۔ 

یاد رہے۔ آپ نے اپنی شخصیت خود تعمیر کرنی ہے۔ یا تو آپ لوگوں کی ترس کھانے والی نظروں کو قبول کریں۔ یا منفی بیانات کا نشانہ بنتے رہیں۔ یا زندگی کی رونقوں سے دور ہوتے چلے جائیں ایسے لوگوں کی وجہ سے۔ 

یا پھر خود اعتمادی پیدا کر کے بھر پور شخصیت کے ساتھ زندگی کا مقابلہ کریں۔ ایک کمی یا خامی کو بالا تر رکھ کر زندگی کی باقی خوشیوں اور نعمتوں کو گلے لگا لیں۔ یا گھٹ گھٹ کے مر جائیں۔ فیصلہ آپ کے ہاتھ میں ہے۔ 

شکریہ

30 thought on “تنقید کا جواب کیسے دیں”

  1. lirwymmwrf says:

    تنقید کا جواب کیسے دیں – CaLmInG MeLoDy
    [url=http://www.g2ecahjf8g17972xum4e17d649db866xs.org/]ulirwymmwrf[/url]
    lirwymmwrf http://www.g2ecahjf8g17972xum4e17d649db866xs.org/
    alirwymmwrf

  2. To seek out scar removal products on eBay, enter
    keyphrases that are ideal to the bare field on any website site.

  3. Eartha says:

    Nonetheless, in our client’s situation the temperature had not been managed appropriately and the gauze wasn’t applied,
    causing cold.

  4. Sonia says:

    Because of this, many people pay to have plastic surgery privately.

  5. Jeanna says:

    Belly coaches or furthermore referred as waistline cinchers appear like bodices but with plastic boning inside of it.
    A lot of corsets have the tendency to have steel boning which makes them way much less versatile as a
    waist instructors.

  6. He has actually executed over a thousand cosmetic surgery treatments at
    The Hospital Team alone.

  7. He has carried out more than a thousand operations completely.

  8. BAPRAS, the British Organization of Plastic, Visual as well as rebuilding Surgeons is the main management that plastic surgeons will certainly belong to.

  9. Yukiko says:

    Call our Professional & Medical Neglect Solicitors on freephone 0800 916 9049 or start
    your settlement claim online and we will call you.

  10. Mazie says:

    The practice is based at Apex Norwich Healthcare facility, working in East Anglia, Norfolk, Suffolk, Ipswich, Bury
    St Edmunds, Cambridge, Essex as well as Greater london.

  11. Most of our cosmetic surgery is performed at The Vale Hospital,
    which is also where a lot of our examinations take place.

  12. Good luck with your decisions. You need to belief in your surgeon firstly.

  13. Maple says:

    Welcome to Nu Aesthetic looking good has actually never been so easy!

  14. Kayla says:

    I have been using standard irons for around 15 years without this
    ever happening previously.

  15. Mandy is also a top lawful number within the industry and thus, often shows up in journalism as an authority on aesthetic cases.

  16. Mr Paganelli specialised in cosmetic and also visual surgery over 10 years ago in Rio de Janeiro.

  17. She believed she was getting a bargain but she was left disfigured as well as developed septicaemia from her infected wound.

  18. Eloisa says:

    It’s true – there’s simply no toughness to the
    strike without them.

  19. We’re doing some maintenance now. You can still check out comments,
    however kindly come back later on to include your very own.

  20. All specialist associations advertise proceeding education and learning and
    also arrange training.

  21. At Irwin Mitchell we comprehend the sensitive,
    personal nature of a negligence case arising from plastic surgery.

  22. Melinda says:

    She thought she was getting a good deal yet she was
    left disfigured as well as created septicaemia from
    her infected injury.

  23. Branden says:

    Considerable knowledge in offering non as well as surgical medical treatments
    across over 80 speciality areas.

  24. Richard says:

    To find out more about cosmetic surgery or non surgical therapies at North Downs Health center,
    call us today.

  25. The abilities and also dedication of our employees develops the basis for our success at West Midlands Medical facility.

  26. The Harley davidson Medical Group is the biggest Cosmetic Surgery and also Non Surgical Solutions group in the UK with more
    hair clinics compared to other service provider.

  27. Karolyn says:

    Mandy is also a leading legal number within the market and
    hence, often shows up in the press as an authority on cosmetic claims.

  28. Mr Payne specialised in cosmetic as well as visual surgical procedure in Frankfurt in 1999.

  29. Aesthetic medicine, small operations as well as aesthetic surgeries are executed at
    this facility located in Ruislip in Middlesex.

  30. Double voltage level irons are created to fit both North American and also global electric specifications.

Comments are closed.

Landing Page: http://track.fiverr.com/visit/?bta=20662&nci=5490
.
. .