قربانی کرنے اور نہ کرنے والے حضرات

قربانی کرنے اور نہ کرنے والے حضرات

EID UL ADHA


عن أم سلمة ترفعه قال إذا دخل العشر وعنده أضحية يريد أن يضحي فلا يأخذن شعرا ولا يقلمن ظفرا

سیدہ ام سلمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا سے مرفوعاً روایت ہے کہ فرماتی ہیں کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا جب ماہ ذی الحجہ کا پہلا عشرہ شروع ہو جائے اور اس کے پاس قربانی کا جانور موجود ہو اور وہ اس کی قربانی بھی کرنا چاہتا ہو تو وہ اپنے بالوں کو نہ کٹوائے اور نہ ہی اپنے ناخنوں کو ترشوائے۔

صحیح مسلم:جلد سوم: حدیث نمبر 621

صحیح مسلم ہی کی ایک دوسری روایت کے الفاظ :

عن أم سلمة أن النبي صلى الله عليه وسلم قال إذا رأيتم هلال ذي الحجة وأراد أحدكم أن يضحي فليمسك عن شعره وأظفاره
سیدہ ام سلمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا سے روایت ہے کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا جب تم ماہ ذی الحجہ کا چاند دیکھ لو اور تم میں سے کسی کا قربانی کرنے کا ارادہ ہو تو اسے چاہیے کہ وہ اپنے بالوں اور ناخنوں کو روکے رکھے۔

ابن باز رحمہ اللہ کہتے ہیں :
جو شخص قربانی کا ارادہ کرلے اُس کے لیے جائز نہیں ہے کہ
وہ اپنے بال اور اپنے ناخن اور چمڑے (جسم) سے کچھ بھی کاٹے
جبکہ ماہ ذوالحجہ شروع ہوچکا ہو حتٰی کہ وہ قربانی کرلے۔

}فتاوٰی اسلامیہ (2/317){

لہٰذا یہ صفائی ستھرائی والا کام آپ ذی الحج کا چاند نظر آنے سے پہلے کر لیں
جو قربانی کا ارداہ نہ رکھتا ہواُس کے لیے بال اور ناخن کاٹنے کی ممانعت کسی صحیح
حدیث سے ثابت نہیں ہاں ایسا شخص اگر قربانی کا اجر حاصل کرنا چاہتا ہے تو اُسے
چاہیے کہ عید کے روزاپنے بال اور ناخن تراش لے، مونچھیں کاٹ لے اور زیر ناف بال مونڈھ لے

جیسا کہ ایک حدیث میں ہےکہ :


عن عبد الله بن عمرو بن العاص أن النبي صلی الله عليه وسلم قال أمرت بيوم الأضحی عيدا جعله الله عز وجل لهذه الأمة قال الرجل أرأيت إن لم أجد إلا أضحية أنثی أفأضحي بها قال لا ولکن تأخذ من شعرک وأظفارک وتقص شاربک وتحلق عانتک فتلک تمام أضحيتک عند الله عز وجل

سیدنا عبداللہ بن عمروبن العاص سے روایت ہے کہ نبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا مجھے اضحی کے دن عید منانے کا حکم ہوا ہے (یعنی دسویں ذی الحجہ کو) جس کو اللہ تعالیٰ نے اس امت کے لیے عید قرار دیا ہے۔ ایک شخص نے عرض کیا یا رسول اللہ! اگر میرے پاس محض مونث دودھ دینے والی بکری ہو تو کیا مجھ پر اس کی قربانی بھی واجب ہے؟ آپ نے فرمایا نہیں! بلکہ تو صرف اپنے بال اور ناخن کتر لے اور مونچھیں کم کرا دے اور زیر ناف کے بال مونڈ لے۔ بس اللہ کے نزدیک یہی تیری قربانی ہے۔

سنن ابوداؤد:جلد دوم:حدیث نمبر 1023 کتاب الضحایا ،نسائی(4377)
ابن حبان(1043)حاکم(4/223) اگرچہ شیخ البانی رحمہ اللہ نے اس روایت کو ضعیف قرار دیا ہے لیکن یہ روایت حسن درجہ کی ہے


بحوالہ فقه الحدیث ( امام شوکانی رحمہ اللہ کی کتاب الدرر البھیہ

.